اردو شاعری

بارِ حیات اُٹھائیے، تنہا اُٹھائیے-تابِش دہلوی
Posted on October 1, 2015
tabish-dehlvi
تابِش دہلوی
بارِ حیات اُٹھائیے، تنہا اُٹھائیے
یہ بوجھ آپ سے نہیں اٹھتا، اٹھائیے
وحشت میں خاک اُڑانی ہی مقسُوم ہے، تو پھر
اک مشتِ خاک کیا سرِ صحرا اُٹھائیے
اُن خفتگانِ راہ کو ہمراہ لے چلیں
قدموں کے ساتھ نقشِ کفِ پا اُٹھائیے
بیمارِ عصر جلد شفایاب ہو سکیں !
گہوارے سے اِک اور مسِیحا اُٹھائیے
دِل میں نَفاظِ شوق کی طاقت کہاں سے لائیں
کوزے میں کیا تلاطمِ دریا اُٹھائیے
دُنیا سے زندگی کا بڑا حوصلہ مِلا
احساں کی طرح، ہر غمِ دُنیا اُٹھائیے
نادِیدہ منظرُوں کو اگر چاہیں دیکھنا
اپنی ہی ذات سے کوئی پردہ اُٹھائیے
پامردِیوں سے گُزرے ہیں جو راہِ شوق میں
پلکوں سے، اُن کی نقشِ کفِ پا اُٹھائیے
تابش! سہارا لیجے نہ اُمّید و بیم کا
تنہا کبھی حجابِ تمنّا اٹھائیے
تابِش دہلوی

Posted in Tabish Dehlvi, تابش دہلویTagged best urdu poetry, daagh dehlvi, design urdu poetry, english, english poems, english poetry, firaq gorakpuri, genesis, gulzar, happy new year, humour, jaun elia, kaleem ajiz, literature, love poetry, nasir kazmi, our poetry corner, plath, poem, poetry, qabil ajmeri, sad urdu poetry, satire, shahzad nayyar, Sylvia plath, ted hughes, the bell jar, translated, tribute to sylvia plath, urdu, urdu literature, urdu poetry, urdu اردو, فارسی, فراق گورکھپوری, قابل اجمیری, منتخب شاعری, میر تقی میر, محبت, نیا سال, ناصر کاظمی, نظمیں, کلیم عاجز, گلزار, انتخاب, اکبر الہ آبادی, ابن انشاء, اردو نثر, اردو ادب, اردو شاعری, اردو طنز و مزاح, اشعار, جون ایلیا, جگر مراد آبادی, جدائی, حفیظ جالندھری, داغ دہلوی, درد, شہزاد نیر, شاعری, غزلیںLeave a comment
زحال مسکیں مکن تغافل دُرائے نیناں بنائے پتیاں-امیر خسرو-ترجمہ
Posted on October 1, 2015
110_Amir-Khusro-portrait
زحال مسکیں مکن تغافل دُرائے نیناں بنائے پتیاں
کہ تابِ ہجراں ندارم اے جاں نہ لیہو کاہے لگائے چھتیاں
(اس غریب کے حال سے تغافل مت برت ،آنکھیں نہ پھیر باتیں بنا کر۔۔۔ میری جاں اب جدائی کی تاب نہیں، مجھے اپنے سینے سے کیوں نہیں لگا لیتے )
شبانِ ہجراں درازچوں زلف دروزوصلت چو عمر کوتاہ
سکھی پیا کو جو میں نہ دیکھوں تو کیسے کاٹوں اندھیری رتیاں
( جدائی کی راتیں زلف کی مانند دراز اور وصال کے دن عمر کی مانند مختصر ۔۔اے دوست محبوب کو دیکھے بِنا یہ اندھیری راتیں کیونکر کاٹوں )
یکایک از دل دو چشم جادو بصد فریبم بہ برد تسکیں
کسے پڑی ہے جو جا سناۓ پیارے پی کو ہماری بتیاں
( پلک جھپکنے میں وہ دو جادو بھری آنکھیں میرے دل کا سکون لے اُڑیں ۔۔۔اب کسے پڑی ھے کہ جا کر محبوب کو ھمارے دل کا حال سنایۓ )
چوں شمع سوزاں چوں ذرہ حیراں ہمیشہ گریاں بہ عشق آں مے
نہ نیند نیناں نہ انگ چیناں نہ آپ آویں نہ بھیجیں پتیاں
(میں عشق میں جلتی ھوئی شمع اور ذرہ ٔ حیراں کی طرح ھمیشہ فریاد کر رھا ھوں ۔۔۔نہ آنکھوں میں نیند نہ تن کو چین کہ نہ تو وہ خود آتے ھیں نہ کوئی پیغام بھیجتے ھیں )
بہ حق روز وصل دلبر کی داد مارا غریب خسرو
سپیت من کے وراۓ رکھوں جو جاۓ پاؤں پیا کے کھتیاں
(خسرو تو جانتا ہے کس کے ملنے کی امید میں بیٹھا ہے؟ جس کی یاد نے تجھ ہر چیز سے بیگانہ بنا دیا ہے۔۔۔
میرا من اسی کی یادوں میں مست رہتا ہے کہ کوئی یار کا رازداں ملے تو
اسے کہوں کہ میرے محبوب تک میری عرضی پہنچا دینا۔)
امیر خسرو

Posted in Ameer Khusro, امیر خسروTagged best urdu poetry, daagh dehlvi, design urdu poetry, english, english poems, english poetry, firaq gorakpuri, genesis, gulzar, happy new year, humour, jaun elia, kaleem ajiz, literature, love poetry, nasir kazmi, our poetry corner, plath, poem, poetry, qabil ajmeri, sad urdu poetry, satire, shahzad nayyar, Sylvia plath, ted hughes, the bell jar, translated, Translated poetry, tribute to sylvia plath, urdu, urdu literature, urdu poetry, urdu اردو, فارسی, فراق گورکھپوری, قابل اجمیری, منتخب شاعری, میر تقی میر, محبت, نیا سال, ناصر کاظمی, نظمیں, کلیم عاجز, گلزار, انتخاب, اکبر الہ آبادی, ابن انشاء, اردو نثر, اردو ادب, اردو شاعری, اردو طنز و مزاح, اشعار, جون ایلیا, جگر مراد آبادی, جدائی, حفیظ جالندھری, داغ دہلوی, درد, شہزاد نیر, شاعری, غزلیںLeave a comment
رنج کی جب گفتگو ہونے لگی-داغ دہلوی
Posted on October 1, 2015
daagh
رنج کی جب گفتگو ہونے لگی
آپ سے تُم، تُم سے تُو ہونے لگی

چاہیے پیغام بر دونوں طرف
لطف کیا جب دو بدو ہونے لگی

میری رسوائی کی نوبت آ گئی
ان کی شہرت کو بکو ہونے لگی

ہے تری تصویر کتنی بے حجاب
ہر کسی کے روبرو ہونے لگی

غیر کے ہوتے بھلا اے شامِ وصل
کیوں ہمارے روبرو ہونے لگی

نا امیدی بڑھ گئی ہے اس قدر
آرزو کی آرزو ہونے لگی

اب کے مل کر دیکھیے کیا رنگ ہو
پھر ہماری جستجو ہونے لگی

داغ اترائے ہوئے پھرتے ہیں آج
شاید اُن کی آبرو ہونے لگی

(داغ دہلوی)

Posted in daagh dehlvi, داغ دہلویTagged best urdu poetry, daagh dehlvi, design urdu poetry, english, english poems, english poetry, firaq gorakpuri, genesis, gulzar, happy new year, humour, jaun elia, kaleem ajiz, literature, love poetry, nasir kazmi, our poetry corner, plath, poem, poetry, qabil ajmeri, sad urdu poetry, satire, shahzad nayyar, Sylvia plath, ted hughes, the bell jar, translated, Translated poetry, tribute to sylvia plath, urdu, urdu literature, urdu poetry, urdu اردو, فارسی, فراق گورکھپوری, قابل اجمیری, منتخب شاعری, میر تقی میر, محبت, نیا سال, ناصر کاظمی, نظمیں, کلیم عاجز, گلزار, انتخاب, اکبر الہ آبادی, ابن انشاء, اردو نثر, اردو ادب, اردو شاعری, اردو طنز و مزاح, اشعار, جون ایلیا, جگر مراد آبادی, جدائی, حفیظ جالندھری, داغ دہلوی, درد, شہزاد نیر, شاعری, غزلیںLeave a comment
مِل جائے مے، تو سجدۂ شُکرانہ چاہیے -حفیظ جالندھری
Posted on October 1, 2015
download (3)
حفیظ جالندھری
مِل جائے مے، تو سجدۂ شُکرانہ چاہیے
پیتے ہی ایک لغزشِ مستانہ چاہیے
ہاں احترامِ کعبہ و بُتخانہ چاہیے
مذہب کی پُوچھیے تو جُداگانہ چاہیے
رِندانِ مے پَرست سِیہ مَست ہی سہی
اے شیخ گفتگوُ تو شریفانہ چاہیے
دِیوانگی ہے، عقل نہیں ہے کہ خام ہو
دِیوانہ ہر لحاظ سے، دِیوانہ چاہیے
اِس زندگی کو چاہیے سامان زندگی
کُچھ بھی نہ ہو تو شِیشہ و پیمانہ چاہیے
او ننگِ اعتبار ! دُعا پر نہ رکھ مدار
او بے وقوف، ہمّتِ مردانہ چاہیے
رہنے دے جامِ جم ، مجھے انجام جم سُنا
کُھل جائے جس سے آنکھ، وہ افسانہ چاہیے
حفیظ جالندھری

Posted in Hafeez jalandhari, حفیظ جالندھریTagged best urdu poetry, daagh dehlvi, design urdu poetry, english, english poems, english poetry, firaq gorakpuri, genesis, gulzar, happy new year, humour, jaun elia, kaleem ajiz, literature, love poetry, nasir kazmi, our poetry corner, plath, poem, poetry, qabil ajmeri, sad urdu poetry, satire, shahzad nayyar, Sylvia plath, ted hughes, the bell jar, translated, Translated poetry, tribute to sylvia plath, urdu, urdu literature, urdu poetry, urdu اردو, فارسی, فراق گورکھپوری, قابل اجمیری, منتخب شاعری, میر تقی میر, محبت, نیا سال, ناصر کاظمی, کلیم عاجز, گلزار, انتخاب, اکبر الہ آبادی, ابن انشاء, اردو نثر, اردو ادب, اردو شاعری, اردو طنز و مزاح, اشعار, جون ایلیا, جگر مراد آبادی, جدائی, حفیظ جالندھری, داغ دہلوی, درد, شہزاد نیر, شاعری, غزلیںLeave a comment
حال اس کا ترے چہرے پہ لکھا لگتا ہے-شہزاد احمد
Posted on October 1, 2015
shehzad-ahmed-poet-dawn-450
حال اس کا ترے چہرے پہ لکھا لگتا ہے
وہ جو چپ چاپ کھڑا ہے ترا کیا لگتا ہے
یوں تری یاد میں دن رات مگن رہتا ہوں
دل دھڑکنا ترے قدموں کی صدا لگتا ہے
یوں تو ہر چیز سلامت ہے مری دنیا میں
اک تعلق ہے کہ جو ٹوٹا ہوا لگتا ہے
اے مرے جذبِ دروں مجھ میں کشش ہے اتنی
جو خطا ہوتا ہے وہ تیر بھی آ لگتا ہے
جانے میں کون سی پستی میں گرا ہوں شہزاد
اس قدر دور ہے سورج کہ دیا لگتا ہے۔

Posted in Shehzad Ahmed, شہزاد احمدTagged best urdu poetry, daagh dehlvi, design urdu poetry, english, english poems, english poetry, firaq gorakpuri, genesis, gulzar, happy new year, humour, jaun elia, kaleem ajiz, literature, love poetry, nasir kazmi, our poetry corner, plath, poem, poetry, qabil ajmeri, sad urdu poetry, satire, shahzad nayyar, Sylvia plath, ted hughes, the bell jar, translated, Translated poetry, tribute to sylvia plath, urdu, urdu literature, urdu poetry, urdu اردو, فارسی, فراق گورکھپوری, قابل اجمیری, منتخب شاعری, میر تقی میر, محبت, نیا سال, ناصر کاظمی, نظمیں, کلیم عاجز, گلزار, انتخاب, اکبر الہ آبادی, ابن انشاء, اردو نثر, اردو ادب, اردو شاعری, اردو طنز و مزاح, اشعار, جون ایلیا, جگر مراد آبادی, جدائی, حفیظ جالندھری, داغ دہلوی, درد, شہزاد نیر, شاعری, غزلیںLeave a comment
چلتے ہو تو چمن کو چلیے، کہتے ہیں بہاراں ہے-میر تقی میر
Posted on October 1, 2015
چلتے ہو تو چمن کو چلیے، کہتے ہیں بہاراں ہے
پات ہرے ہیں، پھول کھلے ہیں، کم کم باد و باراں ہے
رنگ ہوا سے یوں ٹپکے ہے جیسے شراب چواتے ہیں
آگے ہو مے خانے کو نکلو، عہدِ بادہ گساراں ہے
عشق کے میداں داروں میں بھی مرنے کا ہے وصف بہت
یعنی مصیبت ایسی اُٹھانا کارِ کار گزاراں ہے
دل ہے داغ، جگر ہے ٹکڑے، آنسو سارے خون ہوئے
لوہو پانی ایک کرے، یہ عشق لالہ عذاراں ہے
کوہ کن و مجنوں کی خاطر دشت و کوہ میں ہم نہ گئے
عشق میں ہم کو میرؔ نہایت پاسِ عزّت داراں ہے
از میر تقی میر دیوانِ چہارم

Posted in meer taqi meer, میر تقی میرTagged best urdu poetry, daagh dehlvi, design urdu poetry, english, english poems, english poetry, firaq gorakpuri, genesis, gulzar, happy new year, humour, jaun elia, kaleem ajiz, literature, love poetry, nasir kazmi, our poetry corner, plath, poem, poetry, qabil ajmeri, sad urdu poetry, satire, shahzad nayyar, Sylvia plath, ted hughes, the bell jar, translated, Translated poetry, tribute to sylvia plath, urdu, urdu literature, urdu poetry, urdu اردو, فارسی, فراق گورکھپوری, قابل اجمیری, منتخب شاعری, میر تقی میر, محبت, نیا سال, ناصر کاظمی, نظمیں, کلیم عاجز, گلزار, انتخاب, اکبر الہ آبادی, ابن انشاء, اردو نثر, اردو ادب, اردو شاعری, اردو طنز و مزاح, اشعار, جون ایلیا, جگر مراد آبادی, جدائی, حفیظ جالندھری, داغ دہلوی, درد, شہزاد نیر, شاعری, غزلیںLeave a comment
منتخب شاعری/انتخاب
Posted on October 1, 2015
تیرے آنے کی کیا امید مگر
کیسے کہہ دوں کہ انتظار نہیں

فراق گورکھپوری
جس نے سمجھا ہو ہمیشہ دوستی کو کاروبار..
دوستو! وہ تو کسی کا دوست ہو سکتا نہیں!!
(اقبال ساجدؔ)
گونجتی تھی کہیں صدائے جرس
قافلے دل سے رات بھر گزرے
۔۔۔۔۔
باقی صدیقی
یہ مومن خان مومن کا ہے… .

مکتبِ عشق کا ہے دستور نرالا مومن
اس کو چھٹی نہ ملی جسکو سبق یاد ہؤا

میں جانتا ہوں جانتے ہو میرا حالِ دل
میں دیکھتا ہوں دیکھتے ہو کس نگاہ سے
۔۔۔
جگر
د ازل پہ ورز د برخو جواری وہ
اے رحمانہ ! چا گٹلے چا بائیللے

گُزرا اُسی پہ سہل یہ طُوفانِ رنگ و بُو!
جو موسمِ بہار میں دیوانہ بن گیا
تابش دہلوی (مرحُوم)
دینے لگیں گے زخم تو ۔۔۔ دیتے ہی جائیں گے
وہ بڑے ہیں ۔۔۔۔۔ بڑوں کی بڑی بات ہے میاں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کلیم عاجز
اب سنورتے رہو بلا سے میری
دل نے سرکار خودکشی کر لی
تِرا جمال ہے _____ تیرا خیال ہے _____ تُو ہے
مُجھے یہ فرصتِ کاوش کہاں کہ کیا ہُوں میں
اصغرگونڈوی
خلافِ مصلحت میں بھی سمجھتا ھُوں ، مگر ناصح
وہ آتے ھیں تو چہرے پر ، تغیر آ ھی جاتا ھے.
”جوش ملیح آبادی“
حضرتِ ڈارون حقیقت سے نہایت دور تھے
ہم نہ مانیں گے کہ آباء آپ کے لنگور تھے
اکبر الہ آبادی
ہر سو دکھائی دیتے ہیں وہ جلوہ گر مجھے
کیا کیا فریب دیتی ہے میری نظر مجھے

ہر ایک عیب میں خوبی نکالنے والے
یہی تو ہیں مجھے مشکل میں ڈالنے والے

اور آگے بڑھ ذرا اے ہمت مردانہ آج
ہے کوئی پردے میں یا آواز ہی آواز ہے
۔۔۔
عبدالباری آسی
اُٹھے تو درد اُٹھے، ہم تو اُٹھ نہیں سکتے
وہ میرے دامنِ دِل کو دبائے بیٹھے ہیں

ﻣﺠﻬﮯ ﻣﺎﻣُﻮﮞ ﭘﮑﺎﺭﮮ ھﮯ ، ﻣﯿﺮﯼ ﻣﻌﺸﻮﻕ ﮐﺎ ﻟﮍﮐﺎ
ﺍُﺳﮯ ﮔﻮﺩﯼ ﺍﭨﻬﺎﺗﺎ ھُﻮﮞ ، ﺗﻮ ﺁﻧﮑﻬﯿﮟ ﺑﻬﯿﮓ ﺟﺎﺗﯽ ھﯿﮟ۔

وہ دو بھنور , جو تیرے گالوں پہ رقص کرتے ھیں
دل آج بھی , اُنہی تُغیانیوں میں رھتا ھے.

مرجھا کے کالی جھیل میں گرتے ہوئے بھی دیکھ..
سورج ہوں میرا رنگ مگر دن ڈھلے بھی دیکھ..
(شکیبؔ جلالی)
اب کس سے تبسّمِ راز کہیے، اب مہر و وفا کا دور نہیں
اب دنیا کے وہ طور نہیں، اب اور ہے رنگ زمانے کا
(صوفی تبسّم)
دیوتا بننے کی حسرت میں معلق ہو گئے
اب ذرا نیچے اُترئیے آدمی بن جائیے

دل کی بے حیائی کو آواز بنا لیتے ہیں
جب کوئی لفٹ نہ کرائے تو یونہی پھسا لیتے ہیں

میں صرف محبت کا طلب گار تھا لیکن
اِس میں تو بہت کام اضافی نکل آئے
سعود عثمانی

ﻣﻦ ﮐﯽ ﻣﻦ ﻣﯿﮟ ﺑﺎﺕرہﮯ ﺗﻮ ……… ﻣﻦ ﮐﻮ ﻻﮔﮯ ﺭﻭﮒ
ﻣﻦ ﮐﮭﻮﻟﯿﮟ ﺗﻮ ﻣﺸﮑﻞ ﮐﺮ ﺩﯾﮟ …ﺟﯿﻮﻥ ﺍﭘﻨﺎ ﻟﻮﮒ .

اشکِ غَم دیدۂ پُر نَم سے سَنبھالے نہ گئے
یہ وہ لڑکے تھے جو ماں باپ سے پالے نہ گئے
نُوح ناروی

ﺗﯿﻎ ﻧﮕﺎﮦ ﯾﺎﺭ ﮐﻮ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮨﺮ ﮔﮭﮍﯼ ﺩﻋﺎ
ﭘﺎﺭۂ ﺩﻝ ﺟﺪﺍ ﺟﺪﺍ ﻟﺨﺖ ﺟﮕﺮ ﺍﻟﮓ ﺍﻟﮓ !
.
‫#‏داغ‬

یہ کھلے کھلے سے گیسُو ۔۔۔ انہیں لاکھ تُو سنوارے
میرے ہاتھ سے سنورتے ۔۔۔۔۔ تو کچھ اور بات ہوتی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آغا حشر کاشمیری

ﺟﻤﻨﺎ ﻣﯿﮟ ﮐﻞ ﻧﮩﺎ ﮐﺮ ﺟﺐ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﺎﻝ ﺑﺎﻧﺪﮬﮯ
ﮨﻢ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺟﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮐﯿﺎ ﺧﯿﺎﻝ ﺑﺎﻧﺪﮬﮯ
ﺷﯿﺦ ﻏﻼﻡ ﻋﻠﯽ ﮨﻤﺪﺍﻧﯽ ﻣﺼﺤﻔﯽ

اِک زندگی عمَل کے لئے بھی نصیب ہو!
یہ زندگی تو نیک ارادوں میں کَٹ گئی
– خلیل قدوائی

تم جانو تم کو غیر سے جو رسم و راہ ہو
مجھ کو بھی پوچھتے رہو تو کیا گناہ ہو
غالب

تمھاری سینہ فگاری کوئی تو دیکھے گا
نہ دیکھے اب تو نہ دیکھے کبھی تو دیکھے گا
ابن انشا

ﮐﭽﮫ ﺩﻥ ﺍﮔﺮ ﯾﮩﯽ ﺭﮨﺎ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﻭ ﺩﺭ ﮐﺎ ﺭﻧﮓ
ﺩﯾﻮﺍﺭ ﻭ ﺩﺭ ﭘﮧ ﺩﯾﮑﮭﻨﺎ ﺧﻮﻥِ ﺟﮕﺮ ﮐﺎ ﺭﻧﮓ

وہ رُت ہے کہ ہر سانس عذابِ رگِ جاں ہے
اس پر بھی ستم یہ کہ جئے بن نہ رہا جائے
محسن نقوی
نگہ یار نے کی خانہ خرابی ایسی
نہ ٹھکانا ہے جگر کا نہ ٹھکانا دل کا

صحن میں دوڑتے پھرنے کے ہم نہیں قائل
جو ساس ہی کو نہ پٹکے وہ بہو کیا ہے

سنبھالا ہوش تو مرنے لگے حسینوں پر
ہمیں تو موت ہی آئی شباب کے بدلے
شاعر : فخر الدین سخن

نہ ہمّت، نہ قسمت، نہ دِل ہے، نہ آنکھیں
نہ ڈھونڈا، نہ پایا، نہ سمجھا، نہ دیکھا
داغ دہلوی

اک ہجوم_غم_و_کلفت ہے خدا خیر کرے.
جان پر نت_نئی آفت ہے خدا خیر کرے
غلام بھیک نیرنگ

کس نے لہرائی ہیں زلفیں دور تک
کون پھرتا ہے کھلے سر رات میں
(محمد علوی)
اپنے مرکز کی طرف مائلِ پرواز تھا حُسن
بُھولتا ہی نہیں عالم …… تِری انگڑائی کا
عزیز لکھنوی
اپنے حالات سے میں صلح تو کر لوں، لیکن
مجھ میں روپوش جو اک شخص ہے، مر جائے گا
رئیس فروغ

شیخ جانے ……کبیرہ ہے یا صغیرہ ہے
ہمارے پاس ………گناہوں کا ذخیرہ ہے!

وہ دوستی تو خیر اب نصیبِ دشمناں ہوئی
وہ چھوٹی چھوٹی رنجشوں کا لُطف بھی چلا گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ناصر رضا کاظمی

ترے گالوں سے اترا ہے یہ دل میں
ہمیں پرچم سے الفت ہو گئی ہے
عاطفؔ مرزا
جاؤُں جاؤُں ہی جو کہتے ہو’ تَو مانع ہے کون ؟
جاؤ ‘ مت جاؤ ‘ جو جاتے ہو ‘ تو جاؤ ‘ جاؤ !!
( مُصحَفیؔ )

نگاہِ یار کا کیا ہے؟ ہوئی ہوئی نہ ہوئی..
یہ دل کا درد ہے پیارے! گیا گیا نہ گیا..
(فرازؔ)

ﺳﺐ ﮐﯽ ﺍٓﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﭽﺎ ﮐﺮ ﮐﺴﯽ ﺷﺮﻣﯿﻟﯽ ﻧﮯ
ﮬﻢ ﺳﮯ ﯾﻮﮞ ﺁﻧﮑﮫ ﻣﻼﺋﯽ ﮬﮯ ﮐﮧ ﺳﺒﺤﺎﻥ ﺍﻟﻠﮧ

۔ مجھے گِرنا ھے تو میں اپنے ہی قــــــــدموں میں گروں
جس طرح سایہء دیوار پہ دیوار گِرے
( شکیب جلالی

کبھی کبھار اُسے دیکھ لیں، کہیں مِل لیں..
یہ کب کہا تھا کہ وہ خوش بدن ہمارا ہو..
(پروین شاکر)
لاکھ ہم خانماں خراب سہی
حادثوں کی نظر میں رہتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
قابل اجمیری

رُعبِ جمال و جذبِ محبّت تو دیکھنا
اُٹھتی نہیں نِگاہ ، مگر دیکھتا ہوں میں
جگرمُرادآبادی

۔۔۔۔۔ ” وعــــدہ تھا کہ آئینگے ، آئے تو پسِ مُــــــــردن
اِس وعدے کو کیا کہئے ، اِس آنے کو کیا کہئے ۔”
(تسلیم دہلوی )
خود پر بھی کھولیے نہ کبھی دل کی واردات
آئینہ سامنے ہو تو چہرہ چھپائیے
شہزاد احمد
ان کہی بات نے اک حشر اٹھا رکھا تھا
شور اتنا تھا کوئی بات نہ ہونے پائی
احمد مشتاق

سودا خدا کے واسطے کر قصہ مختصر
اپنی تو نیند اڑ گئی تیرے فسانے میں
سودا
میں بتاؤں فرق ناصح جوہے مُجھ میں اور تُجھ میں
میری زندگی تلاطم ، تیری زندگی کنارا
شکیل بدیوانی
پریم گلی اتی سانکڑی اس میں دو نہ سماہین
میں رہوں تو پربھو ناہیں، پربھو رہیں تو میں ناہیں
(میرا بائی)

قسمت کی الجھنوں کو , عدم کس گریز سے
اُس گیسوئے دراز کا بل کہہ گیا ھوں میں
“عبدالحمید عدم”
جیسے گرداب ہے گردش مری ہر چار طرف
شوق کیا جانے لیے مجھ کو کدھر جاتا ہے
میر تقی میر

وہ ہے کھڑکی میں ادھر بھیڑ نظر بازوں کی
آج اس کوچہ میں سنتے ہیں قیامت آئی
آسی غازی پوری

پھر کئی لوگ نظر سے گزرے
پھر کوئی شہرِ طرب یاد آیا.
”ناصر کاظمی“

خود پکارے گی جو منزل تو ٹھہر جاؤں گا
ورنہ خود دار مسافر ہوں گزر جاؤں گا
(مظفرؔ رزمی)

ﺗﻮ ﺟﻮ ﺁﺋﮯ ﺗﻮ ﺍﺳﮯ ﻣﻞ ﮐﮯ ﺳﻤﯿﭩﯿﮟ ﺩﻭﻧﻮﮞ
ﻣﺠﮫ ﺍﮐﯿﻠﮯ ﺳﮯ ﮐﮩﺎﮞ ﮨﺠﺮ ﺳﻨﺒﮭﺎﻻ ﺟﺎﺋﮯ
ﺷﮩﺰﺍﺩ ﻧﯿﺮ
مچل مچل کے میں کہتا ہوں بیٹھیے تو سہی
سنبھل سنبھل کے وہ کہتے ہیں جا رہا ہوں میں

کون سے پھول تھے کل رات ترے بستر پر
آج خوشبو تیرے پہلوے سے عجب آئی ھے
پروین شاکر

عالم میں جس کی دھوم تھی اس شاہکار پر
دیمک نے جو لکھے کبھی وہ تبصرے بھی دیکھ۔
*شکیب جلالی*

نیّر جگ کی اونچ نیچ نے پانی کا رخ موڑ دیا
تیری مل تو وہیں کھڑی ھے،میری فصلیں ڈوب گئیں
شہزاد نیّر

اٹھا جو مینہ بدستِ ساقی، رہی نہ کچھ تابِ ضبط باقی
تمام مے کش پکار اٹھے، “یہاں سے پہلے، یہاں سے پہلے”
شکیلؔ بدایونی
وضو کو مانگ کر پانی خجل نہ کر اے میر!
میاں وہ مفلسی ہے تیمم کو گھر میں خاک نہیں
————

nahi hy gardesh e daura’n pa ikhtyaar magar,
khuda wo din na laye k pareshaan ho tum

jin ki sadaqato’n pa koi shak na kar saky,
tum b kitab e dil ki unhi ayaton mey ho

مشکل ہوا ہے رہنا ہمیں اس دیار میں
برسوں یہاں رہے ہیں یہ اپنا نہیں ہوا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
منیر نیازی
کافی نہیں اندر سے کواڑوں کو تھپکنا
کنڈی درِ تہذیب پہ باہر سے لگی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خیال امروہوی

پنہاں ہے میرے گریہ میں صد جلوہءبہار
صحرا میں بیٹھ جاؤں تو کانٹے نمو کریں
راغب بدیوانی

بولے تو سہی جُھوٹ ہی بولے وہ بلا سے
ظالم کا لب و لہجہ ……. دلآویز بہت ہے
محسن نقوی
فراقِ یار نے بے چئن مجھ کو رات بھر رکھا
کبھی تکیہ ادھر رکھا کبھی تکیہ ادھر رکھا
امیر مینائ۔۔
تیری صُورت سے نہیں ملتی , کسی کی صُورت
ھم جہاں میں , تیری تصویر لیے پھرتے ھیں۔
بے سبب کب کوئی رسوائے فغاں ہوتا ہے
دل سے جب آگ نکلتی ہے دهواں ہوتا ہے
تو جو ہے پاس ، تو اک زندہ حقیقت ہے جہاں
تو نہیں جب، تو یہ وہم و گماں ہوتا ہے
جگر مراد آبادی

ھاتھ خالی ہوں تو دانائ کا اظہار نہ کر
ایسی باتوں کا بڑے لوگ برا مانتے ہین
رام ریاض

اظہار خموشی میں ہے سو طرح کی فریاد
ظاہر کا یہ پردہ ہے کہ میں کچھ نہیں کہتا
میر حسن

دل میں اک رنج مستقل ہے سعود
جس طرح شعلہ منجمد ہوجائے
(سعود عثمانی )

بوجھ شانوں سے پھسل جائے گا آہستہ چلو
ایک اک لمحے پہ صدیوں کا بسیرا ہے یہاں
فضا ابن فیضی
سرمے کا تِل بنا کے رخ لا جواب میں
نقطہ بڑھا رہے ہو خدا کی کتاب میں
استاد قمر جلالوی

Posted in منتخب اشعارTagged best urdu poetry, daagh dehlvi, design urdu poetry, english, english poems, english poetry, firaq gorakpuri, genesis, gulzar, happy new year, humour, jaun elia, kaleem ajiz, literature, love poetry, nasir kazmi, our poetry corner, plath, poem, poetry, qabil ajmeri, sad urdu poetry, satire, shahzad nayyar, Sylvia plath, ted hughes, the bell jar, translated, Translated poetry, tribute to sylvia plath, urdu, urdu literature, urdu poetry, urdu اردو, فارسی, فراق گورکھپوری, قابل اجمیری, منتخب شاعری, میر تقی میر, محبت, نیا سال, ناصر کاظمی, نظمیں, کلیم عاجز, گلزار, انتخاب, اکبر الہ آبادی, ابن انشاء, اردو نثر, اردو ادب, اردو شاعری, اردو طنز و مزاح, اشعار, جون ایلیا, جگر مراد آبادی, جدائی, حفیظ جالندھری, داغ دہلوی, درد, شہزاد نیر, شاعری, غزلیںLeave a comment

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s